Wednesday, March 13, 2013

justajuu khoye huo.n kii umr bhar karate rahe

justajuu khoye huo.n kii umr bhar karate rahe
 
justajuu khoye huo.n kii umr bhar karate rahe 
chaa.Nd ke ham_raah ham har shab safar karate rahe 

raasto.n kaa ilm thaa ham ko na simto.n kii Khabar 
shahar-e-naamaaluum kii chaahat magar karate rahe 

ham ne Khud se bhii chhupaayaa aur saare shahar se 
tere jaane kii Khabar dar-o-divaar karate rahe 

vo na aayegaa hame.n maaluum thaa us shaam bhii 
intazaar us ka magar kuchh soch kar karate rahe 

aaj aayaa hai hame.n bhii un u.Daano.n kaa Khayaal 
jin ko tere zaum me.n be-baal-o-par karate rahe 

isii me.n Khush huu.N meraa dukh ko_ii to sahataa hai

isii me.n Khush huu.N meraa dukh ko_ii to sahataa hai
 
isii me.n Khush huu.N meraa dukh ko_ii to sahataa hai 
chalii chaluu.N ki jahaa.N tak ye saath rahataa hai 

zamiin-e-dil yuu.N hii shaadaab to nahii.n ai dost 
qariib me.n ko_ii dariyaa zaruur bahataa hai 

na jaane kaun saa fiqraa kahaa.N raqm ho jaaye 
dilo.n kaa haal bhii ab kaun kis se kahataa hai 

mere badan ko namii khaa ga_ii ashko.n kii 
bharii bahaar me.n jaise makaan Dahataa hai 

hamaare daramiyaa.N aisaa ko_ii rishtaa nahii.n thaa

hamaare daramiyaa.N aisaa ko_ii rishtaa nahii.n thaa
 
hamaare daramiyaa.N aisaa ko_ii rishtaa nahii.n thaa 
tere shaano.n pe ko_ii chhat nahii.n thii 
mere zimme ko_ii aa.Ngan nahii.n thaa 
ko_ii vaadaa terii zanjiir-e-paa banane nahii.n paayaa 
kisii iqaraar ne merii kalaa_ii ko nahii.n thaamaa 
havaa-e-dasht kii maanind 
tuu aazaad thaa 
raaste terii marzii ke tabe the 
mujhe bhii apanii tanhaa_ii pe 
dekhaa jaaye to 
puuraa tasarruf thaa 
magar jab aaj tuu ne 
raastaa badalaa 
to kuchh aisaa lagaa mujh ko 
ke jaise tuu ne mujh se bevafaa_ii kii

gumaan

gumaan
mai.n kachchii niind me.n huu.N 
aur apane niim_Khvaabidaa tanaffus me.n utaratii 
chaa.Ndanii kii chaap sunatii huu.N 
gumaa.N hai 
aaj bhii shaayad 
mere maathe pe tere lab 
sitaare sabaat karate hai.n 

[niim-Khvaabidaa=half dreaming state; tanaffus=breath] 
[shaap=footstep; gumaa.N=suspicion] 

dil kaa kyaa hai vo to chaahegaa musal_sal milanaa

dil kaa kyaa hai vo to chaahegaa musal_sal milanaa
 
dil kaa kyaa hai vo to chaahegaa musal_sal milanaa 
vo sitam_gar bhii magar soche kisii pal milanaa 

vaa.N nahii.n vaqt to ham bhii hai.n adiim-ul-fursat 
us se kyaa kahiye jo har roz kahe kal milanaa 

ishq kii raah ke musaafir kaa muqaddar maaluum 
dasht-e-ummiid me.n andeshe kaa baadal milanaa 

daaman-e-shab ko agar chaak bhii kar le.n to kahaa.N 
nuur me.n Duubaa huaa subah kaa aa.Nchal milanaa 

dasht-e-shab par dikhaa_ii kyaa dengii

dasht-e-shab par dikhaa_ii kyaa dengii
dasht-e-shab par dikhaa_ii kyaa dengii
silavaTe.n roshanii me.n ubharengii

ghar kii diivaare.n mere jaane par
apanii tanhaa_iyo.n ko sochengii

u.Ngaliyo.n ko taraash duu.N phir bhii
aadatan us kaa naam likkhengii

rang-o-buu se kahii.n panaah nahii.n
Khvaahishe.n bhii kahaa.N amaa.N dengii

ek Khushbuu se bach bhii jaa_uu.N agar
duusarii nikahate.n jaka.D lengii

khi.Dakiyo.n par dabiiz parde ho.n
baarishe.n phir bhii dastake.n dengii

cheharaa meraa thaa nigaahe.n us kii

cheharaa meraa thaa nigaahe.n us kii
cheharaa meraa thaa nigaahe.n us kii
Khaamushii me.n bhii vo baate.n us kii

mere chehare pe Gazal likhatii ga_ii.n
sher kahatii hu_ii aa.Nkhe.n us kii

shoKh lamho.n kaa pataa dene lagii.n
tez hotii hu_ii saa.Nse.n us kii 

aise mausam bhii guzaare ham ne
subahe.n jab apanii thii.n shaame.n us kii

dhyaan me.n us ke ye aalam thaa kabhii
aa.Nkh mahataab kii yaade.n us kii

faisalaa mauj-e-havaa ne likkhaa
aa.Ndhiyaa.N merii bahaare.n us kii

niind is soch se TuuTii aksar 
kis tarah kaTatii hai.n raate.n us kii

duur rah kar bhii sadaa rahatii hai
mujh ko thaame hue baahe.n us kii

baarish hu_ii to phuulo.n ke tan chaak ho gaye

baarish hu_ii to phuulo.n ke tan chaak ho gaye
baarish hu_ii to phuulo.n ke tan chaak ho gaye
mausam ke haath bhiig ke saffaak ho gaye

[chaak = torn; saffaak = cruel]

baadal ko kyaa Khabar ki baarish kii chaah me.n
kitane buland-o-baalaa shajar Khaak ho gaye

[buland-o-baalaa = high and low; shajar = tree]

juganuu ko din ke vaqt paka.Dane kii zid kare.n
bachche hamaare ahad ke chaalaak ho gaye

[ahad = times]

laharaa rahii hai barf kii chaadar haTaa ke ghaas
suuraj kii shah pe tinake bhii bebaak ho gaye

suuraj dimaaG log bhii iblaaG-e-fikr me.n
zulf-e-shab-e-firaaq ke pechaak ho gaye

jab bhii Gariib-e-shahar se kuchh guftaguu hu_ii
lahaje havaa-e-shaam ke nam_naak ho gaye

saahil pe jitane aab_guziidaa the sab ke sab
dariyaa ke ruKh badalate hii tairaak ho gaye

[aab_guziidaa = scared of water; tairaak = swimmers]

baad_baa.N khulane se pahale kaa ishaaraa dekhanaa

baad_baa.N khulane se pahale kaa ishaaraa dekhanaa
baad_baa.N khulane se pahale kaa ishaaraa dekhanaa 
mai.n samandar dekhatii huu.N tum kinaaraa dekhanaa 

yuu.N bichha.Danaa bhii bahut aasaa.N na thaa us se magar 
jaate jaate us kaa vo mu.D ke dubaaraa dekhanaa 

kis shabaahat ko liye aayaa hai daravaaze pe chaa.Nd 
ai shab-e-hijraa.N zaraa apanaa sitaaraa dekhanaa 

[shabaahat=form; shab-e-hijraa.N=night of separation] 

aa_iine kii aa.Nkh hii kuchh kam na thii mere liye 
jaane ab kyaa kyaa dikhaayegaa tumhaaraa dekhanaa 

apanii rusavaa_ii tere naam ka charchaa dekhuu.N

apanii rusavaa_ii tere naam ka charchaa dekhuu.N
apanii rusavaa_ii tere naam ka charchaa dekhuu.N 
ek zaraa sher kahuu.N aur mai.n kyaa kyaa dekhuu.N 

niind aa jaaye to kyaa mahafile.n barpaa dekhuu.N 
aa.Nkh khul jaaye to tanhaa_ii kaa sahara dekhuu.N 

shaam bhii ho ga_ii dhundhalaa ga_ii aa.Nkhe.n bhii merii 
bhuulanevaale mai.n kab tak teraa rastaa dekhuu.N 

sab zide.n us kii mai.n puurii karuu.N har baat sunuu.N 
ek bachche kii tarah se use ha.Nstaa dekhuu.N 

mujh pe chhaa jaaye vo barasaat kii Khushbuu kii tarah 
ang ang apanaa usii rut me.n mahakataa dekhuu.N 

tuu merii tarah se yaktaa hai magar mere habib 
jii me.n aataa hai ko_ii aur bhii tujh saa dekhuu.N 

mai.n ne jis lamhe ko puujaa hai use bas ek baar 
Khvaab ban kar terii aa.Nkho.n me.n utarataa dekhuu.N 

tuu meraa kuchh nahii.n lagataa hai magar jaan-e-hayaat 
jaane kyo.n tere liye dil ko dha.Dakataa dekhuu.N 

Andaaz-e-BayaaN Aur

jalaa hai jism jahaaN dil bhii jal gayaa hogaa
kuredate ho jo ab raakh justajoo kyaa hai


jism = body
justajoo = search

naqsh fariyaadii hai kis kii shoKhii-e-tahreer kaa
kaaGazii hai pairahan harpaikar-e-tasweer kaa


ye masaa_il-e-tasawwuf ye teraa bayaan "Ghalib"
tujhe ham walii samajhate jo ba baadaa_Khwaar hotaa
[Mirza Ghalib]


har ek baat pe kahate ho tum ki tuu kyaa hai
tumhiiN kaho ki ye andaaz-e-guftagoo kyaa hai


aashiqii sabr-talab aur tamannaa betaab
dil kaa kyaa rang karooN Khoon-e-jigar hone tak


muhabbat meN nahiiN hai farq jeene aur marane kaa
usii ko dekh kar jeete haiN jis kaafir pe dam nikale


farq = difference
kaafir = non-believer

raagoN meN dauRate phirane ke ham nahiiN qaayal
jab aaNkh hii se na Tapakaa to phir lahoo kyaa hai


qaayal = fan/admirer (of)

Sunday, March 3, 2013

baaz_gasht

baaz_gasht
 
aisii hii sard shaam thii vo bhii
jab vo mahandii rachaaye haatho.n me.n
apanii aahaT ke Khauf se larazaa.N
surKh aa.Nchal me.n muu.Nh chhipaaye hue
apane Khat mujh se lene aa_ii thii
us kii sahamii hu_ii nigaaho.n me.n
kitanii Khaamosh iltijaaye.N thii.n
us ke chehare kii zard rangat me.n
kitanii majabuuriyo.n ke saaye the
mere haatho.n se Khat paka.Date hii
jaane kyaa soch kar achaanak vo
meraa shaanaa paka.D kar ro_ii thii
us ke yaaquut rang ho.nTho.n ke
kap_kapaate hue kinaaro.n par
saika.Do.n ankahe fasaane the
sard shaamo.n me.n der tak aksar
jab ye manzar dikhaa_ii detaa hai
ek lamhaa hinaa_ii haatho.n se
mujh ko apanii taraf bulaataa hai
ham_nashii.n ruuTh kar naa jaa mujh se
aisii hii sard shaam thii vo bhii

[sard = cold; Khauf = fear; larazaa.N = trembling]
[surKh = red; iltijaa = plea/entreaty]
[zard = yellow/pale; shaanaa = shoulder]
[yaaquut = ruby (a gem); ankahe = unsaid]
[manzar = view/scene; [lamhaa = moment]
[ham_nashii.n = companion]

aaKhirii baat

tuluu-e-shams-e-mufaaraqat hai
puranii kirane.n naye makaano.n ke aa.Ngano.n me.n laraz rahii hai.n
fasiil-e-shahar-e-vafa ke rozan chamakate zarro.n se bhar ga_ii hai.n
gaye dino.n ke aziz baate.n nigar subahe.n gulab raate.n
bisaat-e-dil bhii ajiib shay hai hazaar jiite.n hazaar maate.n
judaa_iyo.n kii havaaye.n lamho.n kii Khush maTTii u.Daa rahii hai.n
ga_ii ruto.n kaa malaal kab tak
chalo ke shaaKhe.n to TuuTatii hai.n
chalo ke qabro.n pe Khuun rone se
apanii aa.Nkhe.n hii phuuTatii hai.n
ye mo.D vo hai jahaa.N se mere tumhaare raste badal gaye hai.n
puraanii raaho.n ko lauTanaa bhii hamaarii qatadiir me.n nahii.n
ke raaste bhii hamaare qadamo.n ke saath aage nikal gaye hai.n

tuluu-e-shams-e-mufaaraqat hai
tum apanii aa.Nkho.n me.n jhil_milaate huye sitaaro.n ko maut de do
ga_ii ruto.n ke tamaam phuulo.n tamaam Khaaro.n ko maut de do
naye safar ko hayaat baKhsho
ke pichhalii raaho.n pe sabt jitane nuquush-e-paa hai.n
vo baar ho.nge
havaa u/Daaye ke tum u.Daao

saKhtiyaa.N karataa huu.N dil par Gair se Gaafil huu.N mai.n

saKhtiyaa.N karataa huu.N dil par Gair se Gaafil huu.N mai.n Sir Mohammed Iqbal
 saKhtiyaa.N karataa huu.N dil par Gair se Gaafil huu.N mai.n
haay kyaa achchhii kahii zaalim huu.N mai.n jaahil huu.N mai.n [Gaafil=unaware/inattentive; zaalim=tyrant; jaahil=illiterate] ** Gaafil also means negligent/careless as used in the next sher** hai merii zillat hii kuchh merii sharaafat kii daliil
jis kii Gafalat ko malak rote hai.n vo Gaafil huu.N mai.n [zillat=insult; Gafalat=carelessness/negligence]
[malak=angel; Gaafil=one who is negligent] bazm-e-hastii apanii aaraa_ish pe tuu naazaa.N na ho
tuu to ik tasviir hai mahafil kii aur mahafil huu.N mai.n [aaraa_ish=decoration; naazaa.N=proud/arrogant] Dhuu.NDhataa phirataa huu.N ai "Iqbal" apane aap ko
aap hii goyaa musaafir aap hii ma.nzil huu.N mai.n [goyaa=as if]

sitaaro.n se aage jahaa.N aur bhii hai.n

sitaaro.n se aage jahaa.N aur bhii hai.n Allama Iqbal  sitaaro.n se aage jahaa.N aur bhii hai.n
abhii ishq ke imtihaa.N aur bhii hai.n
taahii zindagii se nahii.n ye fazaaye.n
yahaa.N saika.Do.n kaaravaa.N aur bhii hai.n
kanaa'at na kar aalam-e-rang-o-bu par
chaman aur bhii, aashiyaa.N aur bhii hai.n
agar kho gayaa ek nasheman to kyaa Gam
maqaamaat-e-aah-o-fugaa.N aur bhii hai.n
tuu shahii.n hai parwaaz hai kaam teraa
tere saamane aasmaa.N aur bhii hai.n
isii roz-o-shab me.n ulajh kar na rah jaa
ke tere zamiin-o-makaa.N aur bhii hai.n
gae din kii tanhaa thaa mai.n a.njuman me.n
yahaa.N ab mere raazadaa.N aur bhii hai.n

tere ishq kii intahaa chaahataa huu.N

tere ishq kii intahaa chaahataa huu.N Sir Mohammed Iqbal
 
tere ishq kii intahaa chaahataa huu.N
merii saadagii dekh kyaa chaahataa huu.N
[intahaa=limit; saadagii=simplicity]
sitam ho ki ho vaadaa-e-behijaabii
ko_ii baat sabr-aazamaa chaahataa huu.N
[vaadaa-e-behijaabii=promise to be unveiled]
[sabr-aazamaa=testing the patience]
ye jannat mubaarak rahe zaahido.n ko
ki mai.n aap kaa saamanaa chaahataa huu.N
[jannat=heaven; zaahid=a person belonging to a higher plane of existence]
ko_ii dam kaa mehamaa.N huu.N ai ahal-e-mahafil
chiraaG-e-sahar huu.N, bujhaa chaahataa huu.N
[ahal-e-mahafil=people present at the gathering]
[chiraaG-e-sahar=light of dawn]
bharii bazm me.n raaz kii baat kah dii
ba.Daa be-adab huu.N, sazaa chaahataa huu.N

tuu abhii rahaguzar me.n hai qaid-e-makaam se guzar

tuu abhii rahaguzar me.n hai qaid-e-makaam se guzar Allama Iqbal
 
tuu abhii rahaguzar me.n hai qaid-e-makaam se guzar
misr-o-hijaaz se guzar, paares-o-shaam se guzar
[misr=Egypt; paares=Paris]
jis kaa amaal hai be-garaz, us kii jazaa kuchh aur hai
huur-o-Khayaam se guzar, baadaa-o-jaam se guzar
garche hai dil_kushaa bahot husn-e-firang kii bahaar
taayarek bula.nd baal daanaa-o-daam se guzar
koh shiGaaf terii zarab tujhase kushaad sharq-o-Garab
teze-hilaahal kii tarah aish-o-nayaam se guzar
teraa imaam be-huzuur, terii namaaz be-suruur
aisii namaz se guzar, aise imaam se guzar

zamii.n-o-aasmaa.N - mumkin hai ke tu jis ko samajhataa hai bahaaraa.N

Zamii.n-o-aasmaa.N
mumkin hai ke tu jisako samajhataa hai bahaaraa.N Allama Iqbal
 
mumkin hai ke tu jisako samajhataa hai bahaaraa.N
auro.n kii nigaaho.n me.n wo mausam ho Khizaa.N kaa
hai sil-silaa ehawaal kaa har lahajaa dagaraguu.N
ae saalek-rah fikr na kar suudo-zayaa.N kaa
shaayad ke zamii.N hai wo kisii aur jahaa.N kii
tuu jisako samajhataa hai falak apane jahaa.N kaa

Nisaiyat,Naina,Neele Chiraagh-Dr.Tahir Taunswi

نسائیت، نیناں اور نیلےچراغ
اردو شاعری کا مطالعہ کریں اور اخبارات و رسائل کا جائزہ لیں تو یوں لگتا ہےکہ ایک سیلِ شاعرات ہےکہ بہتا چلا آرہا ہےاور شعری مجموعوں کا یہ عالم ہےکہ چھپتےچلےجارہےہیں،مشاعرےہوں یا تقریبات خواتین ہیں کہ چھائی چلی جارہی ہیں اور اس فعل
حالِ جاریہ میں معیار کا تجزیہ کریں تو گراف اونچا دکھائی نہیں دیتا بلکہ صورتِ حال کچھ اور دکھائی دیتی ہے:
کہ ہیں کواکب کچھ نظر آتےہیں کچھ
تاہم عہدِ موجود میں ایسی شاعرات بھی ہیں جن کی بدولت اردو شاعرات کا بھرم قائم ہےاور آٹےمیں نمک کےبرابر سہی مگر ان کےاظہار کا اپنا ذائقہ ان کےوجود کی واضح نشاندہی کرتا ہےاس حوالےسےادا جعفری، پروین فنا سید، شبنم شکیل، پروین شاکر، شاہدہ حسن، کشور ناہید، فہمیدہ ریاض، منصورہ احمد، شاہین مفتی، سارہ شگفتہ اس میں چند اور جینوئین شاعرات کا اضافہ بھی کیا جا سکتا ہے۔
خواتین قلم کاروں کےاس قبیلےمیں فرزانہ نیناں بھی انفرادی شان کےساتھ شامل ہوئی ہےاور اس کےکلام ِ غزل و نظم کو پڑھ کر یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں کہ بہت کم عرصےمیں اعتناد اور پوری تخلیقی توانائی سےاپنا شعری سفر طےکرنا شروع کیا ہےاور اس کےشعور و آگہی کی ندی مدھم سروں سےبہتی ہوئی دل و دماغ کو ٹھنڈک اور فکر و نظر کو تازگی عطا کرتی ہےاور اس کی غزل اور نظم کامطالعہ اس بات کا اعلان نامہ بھی ہےکہ اس کےپس منظر میں نیناں ہی بول رہی ہے،
یہ اس کی اپنی آواز ہےجس نےتخلیقی چشمےمیں ارتعاش پیدا کیا ہے۔اس کا شعری ورثہ اپنا ہی ہے، اس کےلب و لہجہ میں جو گداز ، اپنائیت، درد اور شیرینی ہے وہ ایک عورت کےاسلوب کی نشاندہی کرتےہیں۔ اس تناظر میں اس کےشعری مجموعی ‘نیلی رگیں‘ کا نام بھی پوری شعری معنویت کےساتھ سامنےآتا ہےاور جس طرح درد کا رگوں سےگہرا تعلق ہےاور پھر رگوں پر چوٹ (خواہ وہ ہلکی سی کیوں نہ ہو) لگتی ہےاس کی وجہ سےجو نیلاہٹ آجاتی ہےاس دکھ اور درد کی توجیہہ اور اس کے پیدا ہونےکی وجوہات کا تذکرہ لفظوں کےحوالےسےجس طرح نیناں نےکیا ہےاور سماج کی ساری کیفیات کو جیسے بھرپور انداز میں وہ سامنےلائی ہےاس میں اس کا ذاتی تجربہ ،مشاہدہ اور مطالعہ ایک مثلث شکل اختیار کر لیتا ہےاور پھر اس کی سوچ اور فکر کےدھارےرنگا رنگ موضوعات کی صورت میں شعر کےقالب میں ڈھل جاتےہیں،
یہاں دیدہءبینا کی فرزانگی بھی ہےاور عشق و محبت کی دیوانگی بھی، تخلیقی اظہار کےاس تنوع میں نیناں کی نسائیت نےبڑا کردار ادا کیا ہےجو اس کی ذات پر اعتماد سےچھائی ہوئی ہے۔ جس طرح ہندی اور پاکستان کی علاقائی زبانوں میں عورت ہی عاشق کا روپ دھارتی ہے، نیناں کےہاں بھی یہی رویہ ہےکہ وہ دیوانگیءعشق میں سسی کی طرح نہ صرف مارو تھل کی خاک چھانتی ہے بلکہ فراقِ پُنل میں رات بھر اپنی پلکوں کو جھپکنےبھی نہیں دیتی اور یہ اس کی سچی، حقیقی اور بےلوث محبت کا ثبوت ہے،
وہ اپنےمحبوب کی یاد کو سینےسےلگائےاس کےخیال میں گم رہتی ہےاور اپنی ذات کو اس کی ذات میں اس طرح چھپا لیتی ہے جیسے کوئی کسی کی پناہ لےرہا ہو، اس کےیہاں وصلِ یار کی خواہش اورتمنا ضرور ہےمگر اس ہجر کی آگ میں جلنےکا جو عمل ہےاس کا لطف ہی کچھ اور ہے، یہی وجہ ہےکہ وہ یادِ یارِ مہرباں کو اپنی زندگی کا سرمایہ سمجھتی ہے، اس کےاظہار کی یہ جھلکیاں دیکھیں:
تلاش بستی میں کرتا ہےجس کو شہزادہ
وہ مورنی کسی جنگل نےپال رکھی ہے
.............
رہیں گےنام وہ پیڑوں پہ نقش صدیوں تک
چڑھا کےجن پہ بہاروںنےچھال رکھی ہے
.................
نیلگوں جھیل میں ہےچاند کا سایہ لرزاں
موجِ ساکت بھی کوئی آئےسنبھالےاس کو
...................
اپنےبےسمت بھٹکتےہوئےنیناں کی قسم
کتنےخوش بخت ہیں سب دیکھنےوالےاس کو
..................
اب کےٹس سےمس نہیں ہونا ہوا کےزور پر
بےدھڑک لکھےوہ ان پتوں پہ رائےبےحساب
نیلمیں نیناں میں جلتےبجھتےہیں نیلےچراغ
خالی کمرےمیں چلےآتےہیں سائےبےحساب
.......................
نیلےسمندروں کا نشہ بڑھ نہ جائےگا
موتی نکال لاؤں اگر بےشمار میں
....................
کبھی ہم نیل کےپانی میں اس انداز سےڈولیں
کہ اپنی داستاں لکھ دیں اسی دجلہ کےدھاروں میں
....................
ان اشعار میں نیناں نےزندگی، محبت، عشق، چاہت، پیار اور اس سےپیدا شدہ کیفیات کی جو عکس ریزی کی ہےاس میں حیات و
کائنات کےسارےرنگ موجود ہیں، تاہم اسےنیلےرنگ سےزیادہ انس ہے، میرےنزدیک نیلی، نیلگوں،نیلمیں اور نیل کےساتھ نیناں نےجو ہم آہنگی پیدا کی ہےاور پھر درد کی نیلی رگوں نےجو مضمون آفرینی کی ہےاس کےتناظر میں یہ بات سامنےآتی ہےکہ اس نےنیلےرنگ سےاپنی شاعری میں ایک نیا انداز اور نیا طرزِ ہنر پیدا کیا ہےجو حرفی اور معنوی دونوں اعتبارات سےنہ صرف دیکھنےمیں بھلا معلوم ہوتا ہےبلکہ اس کےحسن کو محسوس بھی کیا جا سکتا ہےاور اس کےظاہر و باطن کےموسموں کا بھی ادراک ہو جاتا ہے،
یوں دیکھیں تو نیناں کی غزل کا مزاج ہی بدل جاتا ہےاور نئی رُتوں کا ذائقہ محسوس ہوتاہے، نیناں کےمحسوسات کو اس زاویےسےدیکھین
ہےذرا سا سفر گذارا کر
چند لمحےفقط گوارا کر
آسمانوں سےروشنی جیسا
مجھ پہ الہام اک ستارا کر
دھوپ میں نظم بادلوں پر لکھ
کوئی پرچھائیں استعارا کر
کھو نہ جائےغبار میں، نیناں
مجھ کو اےزندگی پکارا کر
............
یہ خوبصورت اظہار نیناں کی اس طرح کی دوسری غزلوں میں بھی پھیلا ہوا ہےجن میں اس نےاستعارہ، پکارا، ستارا کرنےکی باتیں کی ہیں جن میں کوئی دوسرا شریکِ گفتگو ہےاور وہ بھی اس طرح:
مرےخیال کےبرعکس وہ بھی کیسا ہے
میں چھاؤں چھاؤں سی لڑکی وہ دھوپ جیسا ہے
یونہی نہیں تمہیں نیناں نےروشنی لکھا
تمہارےساتھ ہمارا یہ رشتہ طےسا ہے
................
اس کیفیت کو نیناں نےایک اور رنگ میں یوں بیان کیا ہے:
رات دن سویروں سا خواب جلتا رہتا ہے
شام رنگ جنگل میں، میں ہوں اور مرا ساجن
................
محبت کرنےوالوں کی کہانی بس یہی تو ہے
کبھی نیناں میں بھر جانا کبھی دل میں رچا کرنا
..............
اس طرح دیکھیں تو نینوں میں بھر جانےوالےدل میں رچنےکی بات محبت کرنےوالوں کی کہانی کو جنم دیتی ہےاور اس کہانی کا تسلسل نیناں کی نظموں میں بھی موجود ہےمگر فرق یہ ہےکہ وصال سےزیادہ فراق کا رنگ نمایاں ہے چنانچہ اس کی نظمیں ؛ کبھی تم بھی ہم کو ہی سوچنا؛ کب تم مجھ کو یاد کروگی؛ فقط اک پھول؛ محبت کےثمر آور گلابوں کی داستاں سناتی ہیں مگر اس کےپس منظر میں درد کی جو لےاور دکھ کی جو ر وَ ہےوہ درد کی نیلی رگوں کی صورت میں عکس ریز ہوتےہیں، یہاں اس کا لب و لہجہ بھی بدلا ہوا اور اسلوب بھی مختلف ہےاور بین السطور جو کیفیت ہےاس کا اندازہ مشکل نہیں:
شام کےسناٹےمیں بدن پر کوٹ تمہارا جھولےگا
یاد کا لمس ٹٹولےگا
،گھور اداسی چھولےگا
اونچی اونچی باتوں سےتم
خاموشی میںشور کروگے
گیت پرانےسن کر ٹھنڈی سانسیں بھر کر بھور کروگے
اس پل شب کی تنہائی میں اپنےدل کو شاد کروگے۔۔۔
بولو مجھ کو یاد کروگے۔۔۔!!!
(کب تم مجھ کو یاد کروگے)
...............
کبھی تم بھی ہم کو ہی سوچنا
کبھی اڑتی چڑیاں دبوچنا
یہ کھرنڈ زخموں سےنوچنا
(کبھی تم بھی ہم کو ہی سوچنا)
..............
ان نظموں میں موضوع اور اسلوب کا جو نیا پن ہےوہ نیناں کے بے پناہ تخلیقی شعور اور ندرت، فکر و خیال کی عکاسی کرتا ہےاور اس بات کےامکانات کی بشارت بھی دیتا ہےکہ لمحہءموجود میں اس نےجو کچھ لکھا ہےاور جو بھی اس نےکہا ہےوہ اسےاس قبیلےکی جس کا ذکر آغاز میں ہوا ہے معتبر ،توانا اور منفرد شاعرہ کےطور پر سامنےلاتا ہے، ابھی اسےبہت کچھ کہنا ہے، بہت کچھ دیکھنا ہےاور بہت کچھ سیکھنا ہے، جوں جوں وہ اس حال سےگزرتی جائےگی اس کا رنگ، ہنر،فکروفن نکھرتا اور سنورتا چلا جائےگا۔ آنےوالا وقت یقینی طور پر ‘نیلی رگیں‘ کےمطالعےسےسرشار ہوکر اسےاردو کی منفرد شاعرہ کےطور پر تسلیم کرےگا جبکہ میرےنزدیک اس وقت بھی وہ اردو کی منفرد شاعرہ ہےجس نےنسائیت کےحوالےسےنیناں کےنیلےچراغ روشن کیئےہیں، اس لیئےکہ نیلےرنگ کی چمک کبھی مدھم نہیں ہوتی، آنکھوں میں سمندر کو تیراتی اور آسمان کو لہراتی رہتی ہےاور یہی حال نیناں کی شاعری کا
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...